مد نی بہاریں

الحمد للہ عزوجل مبلغین اشاروں کی زبان سیکھنے کے بعد اپنے شہروں اور علاقوں میں جاکر "مجلس خصوصی اسلامی بھائی "کے تحت گونگے بہرے اسلامی بھائیوں میں نیکی کی دعوت کی دھوم مچانے میں مصروف ہوجاتے ہیں۔ ان پر انفرادی کوشش کے ذریعے ہفتہ وار سنتوںبھرے اجتماع میں شرکت اور مدنی قافلوں میں سفر کی ترکیب بناتے ہیں۔ان کوششوں کی برکت سے معاشرے کے بگڑے ہوئے کئی گونگے بہرے اسلامی بھائیوں کی اصلاح کا سامان ہوا اور وہ گناہوں سے توبہ کرکے نہ صرف خود نمازوں کے پابند اور سنتوں کے پیکربنے بلکہ "مجھے اپنی اور ساری دنیا کے لوگوں کی اصلاح کی کوشش کرنی ہے "کے عظیم مدنی مقصد کے تحت دیگر گونگے بہرے افراد پر انفرادی کوشش میں مصروف ہوگئے۔جس کی برکت سے کئی گونگے بہرے اسلامی بھائیوں کی زندگی میں مدنی انقلاب برپا ہوگیا۔اس کے علاوہ کئی کفارو بد عقیدہ گونگے بہروں کی اپنے باطل دین وعقائد سے توبہ کرکے اسلام قبول کرنے کی بھی اطلاعات ہیں۔اس ضمن میں 3ایمان افروز واقعات پیش خدمت ہیں۔

صلو ا علی الحبیب! صلی اللہ تعالی علی محمد

عیسائی کا قبول اسلام

باب المدینہ کراچی 2007ء میں راہ خدا عزوجل میں سفر کرنے والے نابینااسلامی بھائیوں کا ایک مدنی قافلہ مطلوبہ مسجد تک پہنچنے کیلئے بس میں سوار ہوا۔ اس مدنی قافلے میں چندعمومی اسلامی بھائی بھی شامل تھے۔ امیر قافلہ نے برابر بیٹھے شخص پر انفرادی کوشش کرتے ہوئے اس کانام وغیرہ معلوم کیا تو وہ کہنے لگاکہ" میں عیسائی مذہب سے تعلق رکھتا ہوں۔ میں نے مذہب اسلام کا مطالعہ کیا ہے اور اس مذہب سے متأثر بھی ہوں مگر فی زمانہ مسلمانوں کا بگڑا ہوا کردار میرے اسلام قبول کرنے میں رکاوٹ ہے۔ مگر میں دیکھ رہا ہوں کہ آپ لوگ ایک جیسے(سفید) لباس میں ملبوس ہیں ،بس میں چڑھے اور بلند آواز سے سلام کیا اور حیرانگی تواس بات کی ہے کہ ا پ کے ساتھ نابینا اشخاص نے بھی سر پر سبز عمامہ اور سفید لباس کو اپنا رکھا ہے، ان سب کے چہروں پر داڑھی بھی ہے۔"

اس کی گفتگو سننے کے بعد امیر قافلہ نے اسے مختصر طور پر "مجلس خصوصی اسلامی بھائی "کے بارے میں بتایا۔پھر شیخ طریقت امیر اہلسنت دامت برکاتہم العالیہ کی دین اسلام کیلئے کی جانے والی عظیم خدمات کا تذکرہ کیا اور دعوت اسلامی کے مدنی ماحول کا تعارف بھی کروایا۔پھر اس سے کہا کہ" یہ نابینا اسلامی بھائی انہی دنیا دارمسلمانوں (جنہیں دیکھ کر آپ اسلام قبول کرنے سے کترارہے ہیں)کی اصلاح کے لئے نکلے ہیں۔"یہ بات سن کر وہ اتنا متاثر ہوا کہ کلمہ پڑھ کر مسلمان ہوگیا۔

صلو ا علی الحبیب! صلی اللہ تعالی علی محمد

گونگا مبلغ

صوبہ پنجاب کے شہرخوشاب میں ایک گونگے بہرے اسلامی بھائی جو دعوت اسلامی کے مدنی ماحول کی برکت سے گناہوں سے تائب ہوکر نیکیوں کی راہ پر گامزن ہوچکے تھے۔ ان کے گھر کے قریب ایک گونگے بہرے شخص کی رہائش تھی جو قادیانی تھا۔یہ "خصوصی اسلامی بھائی "اس گونگے قادیانی سے ملاقات کر کے اشاروں کی زبان میں انفرادی کوشش کرتے ہوئے راہ حق کی دعوت پیش کیاکرتے اور اسے سمجھاتے کہ دین اسلام ہی وہ واحد مذہب ہے جس میں دنیا و آخرت کی بھلائیاں پوشیدہ ہیں اور حقیقی قلبی سکون بھی اسی مذہب حق کی قبولیت میں ہے۔وہ گونگا قادیانی دعوت اسلامی کے گونگے مبلغ کی پر تاثیر اصلاحی باتوں میں دلچسپی تولیتا مگر کوئی واضح جواب نہ دیتا۔ وہ (گونگا قادیانی)کچھ دنیوی مسائل کی وجہ سے بہت پریشان تھا اور سکون کی تلاش میں تھا۔اسی دوران دعوت اسلامی کے گونگے مبلغ نے اسے دعوت اسلامی کے بین الاقوامی تین روزہ سنتوں بھرے اجتماع میں شرکت کی دعوت دی۔ جسے اس نے قبول کرلیا۔ جب وہ "گونگا قادیانی" جب مد ینۃ الاولیاء( ملتان شریف) دعوت اسلامی کے سنتوں بھرے اجتماع میں شرکت کے لئے صحرائے مدینہ پہنچا توہر طرف سبز سبز عمامہ شریف کی بہاریں اوردرود وسلام کی صدائیں تھیں ،الغرض ایک عجیب روح پرور سماں تھا۔یہ مناظر دیکھ کر وہ گونگا قادیانی اس مدنی ماحول سے اسقدر متاثر ہوا کہ اس نے وہیں اجتماع میں اپنے باطل مذہب قادیا نیت سے توبہ کی اور کلمہ پڑھ کر مسلمان ہوگےااور شیخ طریقت ،امیر اہلسنت، بانی دعوت اسلامی، حضرت علامہ مولانا ابو بلال محمد الیاس عطارقادری رضوی ضیائی دامت برکاتہم العالیہ سے مرید ہو کر "عطاری " بھی بن گئے۔

صلو ا علی الحبیب! صلی اللہ تعالی علی محمد

ڈیف کلب کے صدر کی بد عقید گی سے توبہ

پنجاب مکی کے ڈویژن خوشاب کے شہر جوہر آباد میں امیر اہلسنت دامت برکاتہم العالیہ کی نگاہ کرم سے ہفتہ وار سنتوں بھرے اجتماع میں " خصوصی اسلامی بھائیوں "کا جب پہلی بار حلقہ لگایا گیا توکثیر تعداد میں گونگے بہرے اسلامی بھائی شریک ہوئے۔اس اجتماع میں " تربیتی کورس برائے اشاروں کی زبان" کے ذمہ دار اسلامی بھائی بھی موجود تھے۔جب مبلغ دعوت اسلامی نے اشاروں کی زبان میں دعوت اسلامی کی مجالس کا تعارف پیش کیاتو خصوصی اسلامی بھائیوں نے خوشگوار حیرت کا اظہار کیا۔اس کے بعد مبلغ نے اشاروں کی زبان میں امیر اہلسنت دامت برکاتہم العالیہ کی ذات مبارکہ کے متعلق بتانا شروع کیا کہ کس طرح آپ دامت برکاتہم العالیہ نے دعوت اسلامی کی بنیاد رکھی اور دن رات کوشش کرکے اس تحریک کے مدنی کام کو12 چاند لگا دئیے۔ آپ دامت برکاتہم العالیہ اکثر روزے سے ہوتے ہیں،کم بولتے ،کم کھاتے،کم سوتے ہیں وغیرہ وغیرہ۔ تذکرہ امیر اہلسنت دامت برکاتہم العالیہ سن کرگونگے بہرے اسلامی بھائی آپ دامت برکاتہم العالیہ کی زیارت کے لئے بے تاب دکھائی دینے لگے۔جب بیان ختم ہوا تو کے بعدتقریباً سبھی گونگے بہرے اسلامی بھائیوں نے اپنا نام امیر اہلسنت دامت برکاتہم العالیہ سے مرید ہونے کے لئے پیش کر دیا مگرایک نے اپنا نام نہیں لکھوایااور مبلغ سے تنہائی میں کچھ کہنے کی خواہش ظاہر کی۔ جب مبلغ اسلامی بھائی نے تنہائی میں اس کی بات سنی تودعوت اسلامی کے مدنی ماحول سے متأثر نظر آنے والے اس گونگے نے اشاروں میں بتایا کہ میں ڈیف کلب کا صدر ہوںمجھ سمیت سارا خاندان سنی مذہب سے لا تعلق ہے،ہمارا گھرانابدعقیدہ فرقے سے تعلق رکھتا ہے اب بتائے میں کیا کروں؟مبلغ اسلامی بھائی نے اشاروں کی زبان میں اس پر انفرادی کوشش کرتے ہوئے باطل عقائد سے توبہ کی ترغیب دلائی تو اس نے برے عقائد سے توبہ کر لی اور اپنا نام امیر اہلسنت دامت برکاتہم العالیہ سے مرید ہونے کیلئے بھی پیش کردیا۔

صلو ا علی الحبیب! صلی اللہ تعالی علی محمد

Top